इतिहास

अमर शहीद सरदार भगत सिंह का उर्दू में अपने भाई को लिखा गया ख़त!

Shahnawaz Alam
==============
Sardar Bhagat Singh’s Urdu letter to his brother Kultar Singh (from jail on 3rd March 1931)
Azeez Kultar
Aaj Tumhari Ankhon Mein Ansu Dekh Kar Bahut Ranj Hua
Aaj Tumhari Baat Mein Bahut Dard Tha
Tumhare Ansu Mujhse Bardasht Nahi Hote.
Barkhurdar, Himmat Se Taalim Haasil Karte Jaana, Aur Sehat Ka Khyal Rakhna.
Hausla Rakhna.
“Unhe Yeh Fikr Hai Har Dam Nayi Tarz-e-Jafa Kya Hai,
Humein Yeh Shouq Hai Dekhein Sitam Ki Inteha Kya Hai.”
“Dahar Se Kyun Khafa Rahen, Charkh Ka Kya Gila Kare
Humara Jahan Adoo Sahi, Aao! Muqabla Karein!”
“Koi Dum Ka Mehman Hun Aye Ahl-e-Mehfil,
Chiragh-e-Seher Hun Bujha Chahta Hun”
“Mere Hawa Mein Rahegi Khayal Ki Bijli,
Yeh Musht-e-Khaak Hai Faani, Rahe Rahe, Na Rahe”
Achha Rukhsat!
“Khush Raho Ahl e Watan Hum Toh Safar Karte Hain”
Hausle se Rehna, Namaste. Tumhara Bhai, Bhagat Singh.


عزیز کلتار۔ آج تمہاری آنکھوں میں آنسو دیکھ کر بہت رنج ہوا۔ آج تمہاری بات میں بہت درد تھا۔ تمہارے آنسو مجھ سے برداشت نہیں ہوتے۔
برخوردار! ہمت سے تعلیم حاصل کرتے جانا اور صحت کا خیال رکھنا۔ حوصلہ رکھنا۔
انہیں یہ فکر ہے ہر دم نئی طرز جفا کیا ہے۔
ہمیں یہ شوق ہے دیکھیں، ستم کی انتہا کیا ہے۔
دہر سے کیوں خفا رہیں، چرخ کا کیا گلہ کریں؟
ہمارا جہان عدو سہی، آوؑ مقابلہ کریں
کوئی دم کا مہمان ہوں اے اہل محفل۔
چراغ سحر ہوں، بجھا چاہتا ہوں۔
میرے ہوا میں رہے گی، خیال کی بجلی۔
یہ مشت خاک ہے فانی۔ رہے رہے نا رہے۔
اچھا رخصت۔
خوش رہو اہل وطن، ہم تو سفر کرتے ہیں۔
حوصلے سے رہنا، نمستے۔ تمہارا بھائی، بھگت سنگھ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *